27th October 2020

اللہ رب العز ت جل شانہ نے انسان کو اشرف المخلوقات بنایاہے۔ انسانوں میں سب سے بہترین شخص وہ ہے جودوسروں کے لئے اچھاہواور دوسروں کو فائدہ پہنچائے۔قرآن پاک میں ارشادپاک ہے کہ اس دنیامیں عزت اورکامیابی انہی لوگوں کونصیب ہوتی ہے جوخلق خداکی خدمت اوراس کو فائدہ پہنچاتے ہیں۔ آنحضورصہ نے ارشادفرمایا”خیرالناس من ینفع الناس”لوگوں میں اچھاوہ ہے جولوگوں کونفع دیتا ہے ۔لوگوں میں اچھا بننے کابہترین طریقہ بھی یہی ہے کہ ہم مخلوق خدا کی خدمت کریں اوراس کوفائدہ پہنچائیں۔کیونکہ اسی میں ہماری دنیاوی کامیابی اورآخرت کی کامیابی کاراز پوشیدہ ہےچند دن پہلے ہم اہل علاقہ کے لیے ایک سانحہ بہت تشویشناک صورت اختیار کر گیا جب سکول کے چھوٹے بچوں کا جھگڑا پورے علاقے کو اپنی لپیٹ میں لے گیاپہلے مرحلے میں چند نوجوان شامل ہوئے تو تکرار اور ہاتھ پائی تک نوبت پہنچی لیکن ان کی تسلی نہ ہوئی تو پھردوسری بیماری جوکہ اب پورے ضلع میں پھیل چکی ہے نوجوان کے گروپس جو ہر وقت اس طاق میں رہتے ہیں کہ کہاں کوئی معمولی سا واقعہ رونما ہونا ہے اور پھر انھوں نے پوری برگیڈ کے ساتھ لشکر کشی کرنی ہوتی ہے جس میں ہر گاوں کے ہر گھر کا بچہ شامل ہوتا ہے یہی واقعہ گاوں چک پنڈی کے کچھ نوجوانوں اور محمود چمنہ اور گردونواح کے نوجوانوں کے درمیان رونما ہوا چالیس پچاس نوجوان چک پنڈی کے رہائشیوں پر حملہ آور ہوگئے لیکن ذات الہی ابھی اس علاقے کے مکینوں پر مہربان تھی کہ دونوں اطراف کے چھ سات نوجوان زخمی ہوگئے اور کسی بڑی انہونی سے بچ گئےیہ واقع تمام والدین کے لیے بہت بڑا لمحہ فکریہ ہونا چاہیےکہ ہماری اولادیں کس رخ پر جارہی ہیں اور مجھے بے حد افسوس ہے ان والدین پر جو اس بات کا بخوبی علم رکھتے ہیں کہ ان کے فرزند ارجمند ان گینگز و گروپس میں شامل ہیں اور یہ مسلح فوج آئے روز مختلف مقامات پر لشکر کشی کررہی ہے جن کی وجہ سے ان کے مستقبل تباہ ہو رہے ہیں یہ بچے ہمارا قیمتی اثاثہ و سرمایہ ہیں جنھوں نے مستقبل میں اس ملک وقوم اور اپنے خاندان کی ذمہ داریوں کی باگ ڈور سنبھالنی ہےلیکن وہ تباہی وبربادی کی طرف جارہے ہیں اور وہ بد نصیب والدین اس بات پر خوش ہوتے ہیں کہ ہمارے بچوں کے دوست واحباب کی تعدادبہت زیادہ ہے فخر محسوس کرتے ہیں یہ کوئی پہلا واقعہ نہیں تھوڑے عرصے میں بہت زیادہ واقعات دیکھ چکا ہوں جن میں بہت زیادہ جانی ومالی نقصانات ہوئے ہیں اور سکولز وکالجز کے طلبا مختلف تھانوں کی سلاخوں کےپیچھے اور والدین آگے بیٹھ کر رو رہے ہوتے ہیں اگر اس رونے سے پہلے ہی اپنے بچوں کو روک لیا کریں تو پھر یہ ذلالت ورسوائی ان کا مقدر نہ بنےبہرحال میں چک پنڈی کے تمام معزز مکینوں نوجوانوں اور چوہرری مدثر اقبال مہرانہ کا شکریہ ادا کرتا ہوں کہ جنھوں نے بڑے پن کا مظاہرہ کرتےہوئے اس معاملے کو طول نہ دیا اور علاقےکے معززین کی مداخلت سے نوجوانوں کو معاف کردیا اور میں چوہدری محمد عارف محمود چمنہ کو خراج تحسین پیش کرتا ہوں جنھوں نے اعلی ظرفی کا مظاہرہ کرتے ہوئے اپنے نوجوانون کی غلطی کا اعتراف کیا صلح میں شامل تمام معززین کا شکریہ ادا کیااللہ عزوجل ہم تمام اہل علاقہ کے عزت و احترام اور عفو ودر گذر کے جذبے کو تقویت فرمائیں اور اس نئی نسل کو اپنے والدین کی بزرگی کی آن اور سفید بالوں کی شان بچانے کی ہدایت عطا فرمائیں

اللہ رب العز ت جل شانہ نے انسان کو اشرف المخلوقات بنایاہے۔ انسانوں میں سب سے بہترین شخص وہ ہے جودوسروں کے لئے اچھاہواور دوسروں کو فائدہ پہنچائے۔قرآن پاک میں ارشادپاک ہے کہ اس دنیامیں عزت اورکامیابی انہی لوگوں کونصیب ہوتی ہے جوخلق خداکی خدمت اوراس کو فائدہ پہنچاتے ہیں۔ آنحضورصہ نے ارشادفرمایا”خیرالناس من ینفع الناس”

لوگوں میں اچھاوہ ہے جولوگوں کونفع دیتا ہے ۔لوگوں میں اچھا بننے کابہترین طریقہ بھی یہی ہے کہ ہم مخلوق خدا کی خدمت کریں اوراس کوفائدہ پہنچائیں۔کیونکہ اسی میں ہماری دنیاوی کامیابی اورآخرت کی کامیابی کاراز پوشیدہ ہے


چند دن پہلے ہم اہل علاقہ کے لیے ایک سانحہ بہت تشویشناک صورت اختیار کر گیا جب سکول کے چھوٹے بچوں کا جھگڑا پورے علاقے کو اپنی لپیٹ میں لے گیاپہلے مرحلے میں چند نوجوان شامل ہوئے تو تکرار اور ہاتھ پائی تک نوبت پہنچی لیکن ان کی تسلی نہ ہوئی تو پھردوسری بیماری جوکہ اب پورے ضلع میں پھیل چکی ہے نوجوان کے گروپس جو ہر وقت اس طاق میں رہتے ہیں کہ کہاں کوئی معمولی سا واقعہ رونما ہونا ہے اور پھر انھوں نے پوری برگیڈ کے ساتھ لشکر کشی کرنی ہوتی ہے جس میں ہر گاوں کے ہر گھر کا بچہ شامل ہوتا ہے یہی واقعہ گاوں چک پنڈی کے کچھ نوجوانوں اور محمود چمنہ اور گردونواح کے نوجوانوں کے درمیان رونما ہوا چالیس پچاس نوجوان چک پنڈی کے رہائشیوں پر حملہ آور ہوگئے لیکن ذات الہی ابھی اس علاقے کے مکینوں پر مہربان تھی کہ دونوں اطراف کے چھ سات نوجوان زخمی ہوگئے اور کسی بڑی انہونی سے بچ گئے

یہ واقع تمام والدین کے لیے بہت بڑا لمحہ فکریہ ہونا چاہیےکہ ہماری اولادیں کس رخ پر جارہی ہیں اور مجھے بے حد افسوس ہے ان والدین پر جو اس بات کا بخوبی علم رکھتے ہیں کہ ان کے فرزند ارجمند ان گینگز و گروپس میں شامل ہیں اور یہ مسلح فوج آئے روز مختلف مقامات پر لشکر کشی کررہی ہے جن کی وجہ سے ان کے مستقبل تباہ ہو رہے ہیں یہ بچے ہمارا قیمتی اثاثہ و سرمایہ ہیں جنھوں نے مستقبل میں اس ملک وقوم اور اپنے خاندان کی ذمہ داریوں کی باگ ڈور سنبھالنی ہےلیکن وہ تباہی وبربادی کی طرف جارہے ہیں اور وہ بد نصیب والدین اس بات پر خوش ہوتے ہیں کہ ہمارے بچوں کے دوست واحباب کی تعدادبہت زیادہ ہے فخر محسوس کرتے ہیں یہ کوئی پہلا واقعہ نہیں تھوڑے عرصے میں بہت زیادہ واقعات دیکھ چکا ہوں جن میں بہت زیادہ جانی ومالی نقصانات ہوئے ہیں اور سکولز وکالجز کے طلبا مختلف تھانوں کی سلاخوں کےپیچھے اور والدین آگے بیٹھ کر رو رہے ہوتے ہیں اگر اس رونے سے پہلے ہی اپنے بچوں کو روک لیا کریں تو پھر یہ ذلالت ورسوائی ان کا مقدر نہ بنے

بہرحال میں چک پنڈی کے تمام معزز مکینوں نوجوانوں اور چوہرری مدثر اقبال مہرانہ کا شکریہ ادا کرتا ہوں کہ جنھوں نے بڑے پن کا مظاہرہ کرتےہوئے اس معاملے کو طول نہ دیا اور علاقےکے معززین کی مداخلت سے نوجوانوں کو معاف کردیا اور میں چوہدری محمد عارف محمود چمنہ کو خراج تحسین پیش کرتا ہوں جنھوں نے اعلی ظرفی کا مظاہرہ کرتے ہوئے اپنے نوجوانون کی غلطی کا اعتراف کیا صلح میں شامل تمام معززین کا شکریہ ادا کیا

اللہ عزوجل ہم تمام اہل علاقہ کے عزت و احترام اور عفو ودر گذر کے جذبے کو تقویت فرمائیں اور اس نئی نسل کو اپنے والدین کی بزرگی کی آن اور سفید بالوں کی شان بچانے کی ہدایت عطا فرمائیں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *