5th December 2020

دھرنے کے دوران ایک ایف سی اہلکار کی جان بچاتے ہوئے پولیس کمانڈو اسرار تنولی نے اپنی ایک آنکھ ضائع کروا لی ۔

دھرنے کے دوران ایک ایف سی اہلکار کی جان بچاتے ہوئے پولیس کمانڈو اسرار تنولی نے اپنی ایک آنکھ ضائع کروا لی ۔
اشفاق احمد نے ایک واقعہ لکھا ہے کہ عید کی نماز پڑھنے کے بعد وہ سیکورٹی ڈیوٹی پر مامور پولیس والوں سے عید ملنے چلے گئے
پاکستانی ادب اور تحریروں میں اس واقعہ کے علاوہ کبھی کسی رائٹر کو یہ توفیق نہیں ہوئی کہ کبھی کسی پولیس والے کی تعریف میں دو لائنیں ہی لکھ دیں
پولیس امن عامہ کے نفاذ کے لئے فرنٹ لائین میں کھڑی ہوتی ہے اس کے آفیسر ملک کے لئے جانیں دیتے ہیں آنکھیں ضائع کراتے ہیں لیکن کبھ کسی میڈیا گروپ نے ان کے بچوں کی تصویریں دکھا کر یہ کلپ نہیں چلائے کہ ان کا والی وارث کون بنے گا
کبھی کسی نے ان کے لئے گیت نہیں گائے

“تمہیں وطن کی ہوائیں سلام کہتی ہیں ”
کیا وہ وطن کے بیٹے نہیں ؟ کیا ان کی قربانی کا کوئی مول نہیں ؟
محمودچوہدری

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *